Skip to main content

Posts

Showing posts with the label عمران خان

عمران خان ریپٹلین سائیکوپیتھ

نفسیاتی مریض یا پاگل لفظ 'سائیکوپیتھ' کا درست ترجمہ نہیں۔ بلکہ 'سائیکوپیتھ' عام لوگوں کی نسبت ذہنی طور پر زیادہ چاک و چوبند ہوسکتے ہیں۔ ان کو 'ہیومن پریڈیٹرز' بھی کہا جاتا ہے۔ 'ہیومن پریڈیٹرز' یعنی یہ انسانوں کی جان، مال حتی کہ ان کے احساسات اور جذبات کا بھی شکار کرتے ہیں۔  وہ یہ سب یہ کیسے کر لیتے ہیں اور میں نے عنوان میں عمران خان کا نام کیوں لکھا ہے؟ اس کا جواب یہ ہے کہ 'سائیکوپیتھ' میں دوسرے انسانوں سے الگ کچھ صفات ہوتی ہیں جو ان کو قدرتی شکاری بناتی ہیں۔ انکی یہ صفات دنیا بھر کے ماہرین نے برسوں کی تحقیق اور محنت کے بعد جمع کی ہیں اور حیرت انگیز طور پر وہ تقریباً ساری عمران خان میں پائی جاتی ہیں۔  سائیکوپیتھس کو 'ریپٹلینز' بھی کہا جاتا ہے۔ کیونکہ انکی کچھ عادتیں ریپٹلینزجیسی ہوتی ہیں۔ ریپٹلینز کے بارے میں قرآن اور سائنس نے کچھ آگہی دی ہے اس پر بھی بات کرینگے۔  اگر آپ ایک بار ٹھنڈے دل سے یہ مضمون پڑھ لیں تو شائد آپ عمران خان کی مقبولیت، شخصیت، سوچ اور فیصلوں کو سمجھ لیں۔ بہت سی چیزوں کے بارے میں آپ کی حیرت دور ہوسکتی ہے۔  ریپٹلین سائیک

پارلیمنٹ سے بازار حسن تک عمران خان

  سوشل میڈیا پر عمران خان کے ننگے ہونگے پر پی ٹی آئی کے کچھ بڑے لونڈے لپاڑوں نے لکھا کہ 'پارلیمنٹ سے بازار حسن تک' کتاب پڑھو جس میں لکھا ہے کہ نواز شریف طاہرہ سید کے زلف کے اسیر تھے۔ اسی وجہ سے ان کو مری چیئر لفٹ کا ٹھیکہ بھی دیا۔  میں نے کتاب پڑھی اور اس میں واقعی یہ لکھا تھا بلکہ نواز شریف کے حوالے سے دلشاد بیگم کا بھی تذکرہ تھا۔ مجھے تو اس پر سو فیصد یقین ہے کہ سچ ہی لکھا ہوگا۔  لیکن اس کتاب کو یوتھیوں کو پورا پڑھنا چاہئے تھا۔ کیونکہ اس میں  صفحہ 168 پر لکھا ہے کہ  "انبساط عمران خان کو چاچو کہتی تھی۔ لیکن وہ روز ایک نئی لڑکی کے ساتھ حویلی پہنچ جاتا تھا اور یوسف کے ساتھ ملکر داد عیش دیتا تھا۔" صفحہ 169 پر لکھا ہے کہ  "عمران خان حویلی میں جو کچھ کر رہا تھا وہ ناقابل برداشت تھا۔" "میں عمران خان کی نظریں پہچان گئی تھی۔ اس لیے جان بوجھ کر ان کو چاچو کہتی تھی۔ عمران خان مفت خورہ تھا۔ دوسروں کے پلے سے عیاشی کرنا اپنا حق سمجھتا تھا۔ گھر پر عملاً عمران خان کا قبضہ تھا۔ ہر رات نوکروں کے ساتھ حسین لڑکیاں لاتے اور کہتے 'بستر لگادو، بستر لگادو'۔ صفحہ 176

عمران خان کے جنسی سکینڈلز

 عمران خان نے توبہ کب کی؟ کیا واقعی یہ سب جھوٹ بول رہی ہیں؟ زینت امان  ان کے ساتھ عمران خان صاحب 1979ء میں انڈیا کے ٹور پر ایک ہوٹل میں رنگ رلیاں مناتے پکڑے گئے۔ انڈیا کے اخبارات نے پہلی بار عمران خان کو 'پلے بوائے' کا لقب دیا۔ زینت امان نے عمران خان پر طنزیہ تبصرہ کیا تھا کہ 'نام بڑے درشن چھوٹے' سیتاوایٹ  سیتاوائٹ 1992ء میں عدالت گئیں کہ بےشک ڈی این اے کروا لیں میرے پیٹ میں پلنے والی بچی ٹیریان واھائٹ عمران خان کی بیٹی ہے۔ عمران خان مجھ پر دباؤ ڈال رہا ہے کہ بچی کو پیٹ میں ہی مار دو۔ عدالت نے اس کے حق میں فیصلہ سنایا۔  ابتسام مطلوب خان ابتسام مطلوب خان نے 1997ء میں باقاعدہ انٹرویو دیا کہ عمران خان نے دلالی کر کے میرا گھر اجاڑ دیا۔ وہ اپنے ساتھ ساتھ  میرے شوہر یوسف کے لیے بھی لڑکیاں لاتا ہے اور میرے گھر کو چکلہ بنایا ہوا ہے۔  عائلہ ملک اور سمیرا ملک  سال 2009ء میں عمران خان کی عائلہ ملک اور اس کی بہن سمیرا ملک کے ساتھ بیک وقت ملوث ہونے کی خبریں چلیں۔ یہ بھی کہ عمران خان عائلہ ملک سے شادی کرنے والے ہیں۔  حاجرہ پانزئی حاجرہ پانزئی نامی خاتون نے سال 2014ء میں عمران خان پر

عمران خان ریپٹلین سائیکوپیتھ

نفسیاتی مریض یا پاگل لفظ 'سائیکوپیتھ' کا درست ترجمہ نہیں۔ بلکہ 'سائیکوپیتھ' عام لوگوں کی نسبت ذہنی طور پر زیادہ چاک و چوبند ہوسکتے ہیں۔ ان کو 'ہیومن پریڈیٹرز' بھی کہا جاتا ہے۔ 'ہیومن پریڈیٹرز' یعنی یہ انسانوں کی جان، مال حتی کہ ان کے احساسات اور جذبات کا بھی شکار کرتے ہیں۔  وہ یہ سب یہ کیسے کر لیتے ہیں اور میں نے عنوان میں عمران خان کا نام کیوں لکھا ہے؟ اس کا جواب یہ ہے کہ 'سائیکوپیتھ' میں دوسرے انسانوں سے الگ کچھ صفات ہوتی ہیں جو ان کو قدرتی شکاری بناتی ہیں۔ انکی یہ صفات دنیا بھر کے ماہرین نے برسوں کی تحقیق اور محنت کے بعد جمع کی ہیں اور حیرت انگیز طور پر وہ تقریباً ساری عمران خان میں پائی جاتی ہیں۔  سائیکوپیتھس کو 'ریپٹلینز' بھی کہا جاتا ہے۔ کیونکہ انکی کچھ عادتیں ریپٹلینزجیسی ہوتی ہیں۔ ریپٹلینز کے بارے میں قرآن اور سائنس نے کچھ آگہی دی ہے اس پر بھی بات کرینگے۔  اگر آپ ایک بار ٹھنڈے دل سے یہ مضمون پڑھ لیں تو شائد آپ عمران خان کی مقبولیت، شخصیت، سوچ اور فیصلوں کو سمجھ لیں۔ بہت سی چیزوں کے بارے میں آپ کی حیرت دور ہوسکتی ہے۔  ریپٹلین سائیک